اپنے اپنے بت

 نظریات اور افکار میں تبدیلی کا پیمانہ کبھی بھی گالم گلوچ اور لغو زبان نہیں ھوسکتا۔ میں دنیا کے ھر شخص، عقائد، سیاسی و مذھبی پیشواؤں اور ان کے پیروکاروں کے لئے اچھا گمان رکھتا ھوں، اور آخری حد تک یہ کوشش کرتا ھوں کہ کسی کے بارے میں تعصب یا جج منٹ اپنانے کے ناپختہ رویے سے گریز کروں۔

ھر فرد کے اپنے اپنے بت ھیں، جنہیں وہ سب سے برتر اور تنقید سے بالاتر سمجھتا ھے۔ اس خبط میں وہ دوسروں کے بتوں کو توڑکر اور ان پر تھوک کر اپنی خود ساختہ انا کی تسکین چاھتا ھے۔ ضروری نہیں کہ آپ کے اور میرے آدرش (آئیڈیل) اور اقدار حیات ایک سے ھوں۔ البتہ یہ بات عالمی و سماجی، ھر نوع کے اخلاقی اصولوں سے ھم آھنگ ھے کہ بد زبانی اور تضحیک آمیز رویہ، کبھی بھی دلیل کا متبادل نہیں ھو سکتا۔ ذیادہ سے ذیادہ ھم سب اپنی اپنی ایک رائے رکھتے ھیں، اور اس کے حق میں لاکھ تاویلیں پیش کرسکتے ھیں۔

واضح رھے کہ میری آراء تمام تر اخلاص کے باوصف، وقت، سوچ اور حالات کے ساتھ تبدیل ھوسکتی ھیں۔ اس لئے میں ایک مصلح نہیں ھوں اور نہ ھی آپ کو اس خود ساختہ منصب پر بیٹھتا دیکھ کر آپ کی چوکھٹ پر سر جھکاؤں گا۔

 اپنے اپنے بت

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s