خواب ذدہ ۔ ۱

میرے غیر مطبوعہ ناول ‘‘خواب ذدہ’’ سے ایک اقتباس۔

___________________________

۔ھاں، ھاں، ٹھیک ھی تو ھے۔۔۔ نروان۔۔۔ ھمم۔۔۔ نروان۔۔۔ میں تمہیں بتاتا ھوں۔۔۔ وہ رھا نروان کا زینہ۔۔۔” یوروف نے اپنی انگلی سے ایک جانب اشارہ کرتے ھوئے کہا۔

میں نے اس طرف اپنا سر گھمایا۔ وہ ایک لڑکی تھی، جس نے اپنے ھاتھوں میں سیاھی مائل مرجھایا ھوا گلاب تھام رکھا تھا۔ اس کی آمد کے ساتھ ھی “قصر جمال” میں موجود لوگوں میں بے چینی کی لہر سی دوڑنے لگی۔

کیا یہ آج بھی رقص نہ کرے گی؟” یوروف نے سرد آہ بھری، اور میں اس کا منہ دیکھنے گا۔۔

 

Dead rose

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s